عید الا ضحی ٰ کی رات کاوظیفہ

آج کا وظیفہ بڑا ہی کمال کا ہے۔ آج کا وظیفہ 9 ذی الحج کا ہے۔ عمل بتانے سے پہلے اس وظیفے کی اہمیت جان لیں۔ حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی  ہے کہ حضوراکرمﷺ  نے ارشادفرمایاکہ: ان دس ایام میں اللہ تعالیٰ کو جس قدر یہ بات پسند ہے ۔ کہ محنت وکوشش کرکے اس کے فرمانبردار بندے بنیں۔ اس سے بڑھ کر اور دنوں میں پسند نہیں ۔ ان دس ایام میں سے ہر یوم کا روزہ ایک برس کے روزے کے برابر ہے اور ہر شب کا قیام شب قدر میں کھڑے ہونےکے برابر ہے۔ یہ عمل خود بھی کریں۔ اور اپنے رشتہ داروں  کو بھی اس عمل کے بارےمیں بتائیں ۔ تاکہ وہ بھی اس عمل سے فائدہ اٹھا سکیں۔اس عمل سے بڑھ کر کوئی عمل نہیں ہے۔ انسان زندگی میں بڑی کامیابیاں حاصل کرتا ہے۔ مگر اس عمل کے بعد  کامیابی سب سے بڑی کامیابی ہے۔

یہ کہنا بجا ہوگا ۔ کہ انسان کی یہ آخری خواہش ہے۔اب آپ کو عمل بتا دیتےہیں ۔ کہ عید الاضحیٰ کی شب کو یعنی کہ9 ذی الحج کو آپ نے بارہ رکعات نوافل کے ادا کرنے  ہیں۔ اور یہ دو دو رکعت نفل کرکے اد ا کرنے ہیں۔  آپ نے دو رکعت میں پہلی رکعت میں سورت الفاتحہ کے بعد ایک مرتبہ آیت الکرسی اور دوسری رکعت میں سورت الفاتحہ کے بعد تین مرتبہ آپ نے سورت اخلاص کو پڑھنا ہے اور سلام پھیرنےکے بعد  ایک  مرتبہ سبحان والحمد اللہ اور دس مرتبہ سورت اخلاص پڑھنی ہے اور ایک مرتبہ سورت الناس کو پڑھنا ہے۔ اس طرح دو رکعت کے بعد یہ عمل کرلینا ہے۔ا س طرح آپ نے یہ بارہ رکعتیں ادا کرلینی ہیں۔ اس کے بعد آپ نے دعا مانگنی ہے۔

انشاءاللہ! آپ دعا میں جو بھی مانگیں گے ۔ اللہ تعالیٰ آپ کو عطاکرےگا۔  اس سے بڑھ کر آپ کو دس شہیدوں کا ثواب عطا ہوگا۔ اور اللہ تعالیٰ اپنے فضل وکرم سے جنت الفردو س میں جگہ عطافرمائےگا۔ انسان دنیا کے مال ومتاع کےلیے بہت کوششیں کرتا ہے۔ بہت وظائف کرتا ہے۔ لہٰذاآپ کو آخرت کے حوالےسے بھی بتا دیا ہے۔ یہ چھوٹاسا عمل کریں۔ انشاءاللہ!فائدہ ہوگا۔

Comments are closed.