ذی الحج کی 9 یا10 کو اللہ تعالیٰ کا 1نام کا وظیفہ بتارہاہوں

یہ جو اللہ تعالیٰ کا صفاتی  نام ہے۔ یہ  جو بندہ پڑھ لیتا ہے دولت وہاں پر ختم ہونے کا نام نہیں لیتی ۔ اتنا زیادہ اس بندے کے پاس پیسا آجاتا ہے۔ اتنا زیادہ رزق آجاتا ہے۔ آپ کو وظیفہ بتاتے ہیں کہ آپ نے وظیفہ اس طرح کرنا ہے ۔ کہ روزانہ آپ نے جب آپ فجر کی نماز ادا کرلیں۔ جو مرد حضرات ہیں وہ کوشش کریں کہ وہ مسجد میں جماعت کے ساتھ نماز ادا کریں۔ جو خواتین ہیں۔ مائیں ہیں ۔ بہنیں ہیں۔ وہ گھر میں نماز ادا کریں۔ جب آپ نے نماز فجر کی ادا کرلیں۔ تو اس کے بعد دعا کرلیں۔ دعا کے بعد آپ نے گیارہ مرتبہ  درود ابراہیمی پڑھ  لینا ہے اور اس کے بعد دس سیکنڈ کا عمل ہے۔ یہ اللہ تعالیٰ کاصفاتی نام ہے۔ آپ نے اللہ تعالیٰ کے صفاتی نام ” یا باسط” کو صرف دس مرتبہ پڑھ لینا ہے۔ دس مرتبہ پڑھنے کے بعد آپ نے اپنےہاتھ منہ پر پھیر لینا ہے۔

دس مرتبہ جب یہ عمل کرلیں۔ اس وقت ہاتھ اپنے منہ پھیر لیں۔ اتنا مبارک عمل ہے۔ اتنا پیارا عمل ہے کہ ایک دن عمل کریں۔ دوسرے دن کریں گے ۔ تیسرے دن کریں گے۔ جیسے جیسے یہ عمل کرتےجائیں گے ۔ آپ خود سوچیں گے ۔ دیکھیں گے ۔ کہ میرے پاس پیسا کدھر سے آرہی ہے۔ میرے پاس دولت کدھرسے آرہی ہے۔ آپ کے اوپر قرض ہے۔ تو اللہ تعالیٰ آپ کو قرض سے نجات دلائےگا۔ یہ اتنا مبارک عمل ہے ۔ یہ ہر ناممکن کام کو ممکن کردیتا ہے۔ اسی وظیفہ کا جو دوسرا طریقہ کار ہے دس سیکنڈ والا تو ہر روز کرنا ہے۔ دوسرا جو ہے وہ آپ عید والے دن کرلیں۔ یا عید سےایک دن پہلے کرلیں۔ آپ نے اکیس تسبیح یعنی اکیس سو مرتبہ یہی اللہ تعالیٰ کا صفاتی نام ” یا باسط” کو پڑھنا ہے۔ اول وآخر درود پاک پڑھ لیں۔ ایک نشست میں پڑھ لیں۔

دو نشست میں پڑھ لیں۔ یعنی ایک دفعہ بیٹھ کر پڑھ لیں۔ دو دفعہ بیٹھ کر پڑھ لیں۔ گیارہ سو مرتبہ  ایک دفعہ  اور ایک ہزار مرتبہ ایک دفعہ یا جس طرح آپ پڑھنا چاہیں آپ پڑھ سکتےہیں۔ جیسے آپ کو آسانی لگے ۔ اس طرح آپ عمل کرسکتےہیں۔ اس کے بعد دعا کریں۔ آپ اپنے مسائل  ہیں ۔ جو بھی پریشانیاں ہیں۔ ہاتھ پھیلا کر اللہ کی بارگاہ میں دعا کریں۔ انشاءاللہ! اس عمل کی برکت سے ہر ناممکن کام ممکن ہوجائےگا۔ اور ہر گزرتے دن کے ساتھ آپ کی دولت میں ، آپ کے پیسے میں اضافہ ہوتا جائےگا۔ یہ جو عمل ہے۔ یہ عمل آپ کی زندگی بدل دےگا۔ آپ کی مشکلات ختم کردےگا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *